Ghazals
Total 57 Ghazals

۱ یہ کیسی آگ برستی ہے آسمانوں سے پرندے لوٹ کے آنے لگے اڑانوں سے کوئی تو ڈھونڈ کے مجھ کو کہیں سے لے آئے کہ خود کو دیکھا نہیں ہے بہت زمانوں سے پلک جھپکتے میں میرے اڑان بھرتے ہی ہزاروں تیر نکل آئیں گے کمانوں سے ہوئی ہیں دیر و حرم میں یہ سازشیں کیسی دھواں سا اٹھنے لگا شہر کے مکانوں سے شکار کرنا تھا جن کو شکار کر کے گئے شکاریو اتر آؤ تم اب مچانوں سے روایتوں کو کہاں تک اٹھائے گھومو گے یہ بوجھ اتار دو پاشیؔ تم اپنے شانوں سے ۲ لوگ جب...

پورا پڑھیں

کمال بے خبری کو خبر سمجھتے ہیں تری نگاہ کو جو معتبر سمجھتے ہیں فروغ طور کی یوں تو ہزار تاویلیں ہم اک چراغ سر رہ گزر سمجھتے ہیں لب نگار کو زحمت نہ دو خدا کے لیے ہم اہل شوق زبان نظر سمجھتے ہیں جناب شیخ سمجھتے ہیں خوب رندوں کو جناب شیخ کو ہم بھی مگر سمجھتے ہیں وہ خاک سمجھیں گے راز گل و سمن تاباںؔ جو رنگ و بو کو فریب نظر سمجھتے ہیں   گلوں کے ساتھ اجل کے پیام بھی آئے بہار آئی تو گلشن میں دام بھی آئے ہمیں نہ کر سکے تجدید...

پورا پڑھیں

آج بازار میں پا بہ جولاں چلو چشم نم جان شوریدہ کافی نہیں تہمت عشق پوشیدہ کافی نہیں آج بازار میں پا بہ جولاں چلو دست افشاں چلو مست و رقصاں چلو خاک بر سر چلو خوں بداماں چلو راہ تکتا ہے سب شہر جاناں چلو حاکم شہر بھی مجمع عام بھی تیر الزام بھی سنگ دشنام بھی صبح ناشاد بھی روز ناکام بھی ان کا دم ساز اپنے سوا کون ہے شہر جاناں میں اب با صفا کون ہے دست قاتل کے شایاں رہا کون ہے رخت دل باندھ لو دل فگارو چلو پھر ہمیں قتل ہو آئیں یارو...

پورا پڑھیں

  وقت یہ کیسا آن پڑا ہے خطرے میں ایمان پڑا ہے بھوکا ننگا مر رہنے کو سارا ہندوستان پڑا ہے اک کونے میں ہم رہتے ہیں دوسرے میں مہمان پڑا ہے کون سے ہم اللہ والے ہیں پیچھے کیوں شیطان پڑا ہے ٭٭٭ ہر چند جاگتے ہیں پہ سوئے ہوئے سے ہیں سب اپنے اپنے خوابوں میں کھوئے ہوئے سے ہیں میں شام کے حصار میں جکڑا ہوا سا ہوں منظر مرے لہو میں ڈبوئے ہوئے سے ہیں محسوس ہو رہا ہے یہ پھولوں کو دیکھ کر جیسے تمام رات کے روئے ہوئے سے ہیں اک ڈور ہی ہے...

پورا پڑھیں

اختر مسلمی کا نام عبید اللہ اور آبائی وطن پھریہا (اعظم گڈھ) تھا۔ یکم جنوری 1928 کو اعظم گڈھ کے مردم خیز گاﺅں مسلم پٹی میں آپ کی ولادت ہوئی اسی نسبت سے خود کو مسلمی لکھتے تھے۔ ابتدائی تعلیم اپنے والد حافظ عطاءاللہ صاحب سے حاصل کی، بعد ازاں مزید تعلیم کے لیے انھوں نے 1938میں اپنے علاقہ کی مشہور دینی درسگاہ مدرسة الاصلاح، سرائے میر، اعظم گڈھ میں داخلہ لیا اور 11 سال کی عمر میں حفظ قرآن مکمل کیا۔ اختر مسلمی کی شاعری کی ابتدا بہت کم عمر میں ہوگئی تھی. 12 برس کی عمر میں وہ...

پورا پڑھیں

1 دیار دل کی رات میں چراغ سا جلا گیا ملا نہیں تو کیا ہوا وہ شکل تو دکھا گیا وہ دوستی تو خیر اب نصیب دشمناں ہوئی وہ چھوٹی چھوٹی رنجشوں کا لطف بھی چلا گیا جدائیوں کے زخم درد زندگی نے بھر دیے تجھے بھی نیند آ گئی مجھے بھی صبر آ گیا پکارتی ہیں فرصتیں کہاں گئیں وہ صحبتیں زمیں نگل گئی انہیں کہ آسمان کھا گیا یہ صبح کی سفیدیاں یہ دوپہر کی زردیاں اب آئنے میں دیکھتا ہوں میں کہاں چلا گیا یہ کس خوشی کی ریت پر غموں کو نیند آ گئی وہ لہر...

پورا پڑھیں

شکست زنداں کا خواب کیا ہند کا زنداں کانپ رہا ہے گونج رہی ہیں تکبیریں اکتائے ہیں شاید کچھ قیدی اور توڑ رہے ہیں زنجیریں دیواروں کے نیچے آ آ کر یوں جمع ہوئے ہیں زندانی سینوں میں تلاطم بجلی کا آنکھوں میں جھلکتی شمشیریں بھوکوں کی نظر میں بجلی ہے توپوں کے دہانے ٹھنڈے ہیں تقدیر کے لب کو جنبش ہے دم توڑ رہی ہیں تدبیریں آنکھوں میں گدا کی سرخی ہے بے نور ہے چہرہ سلطاں کا تخریب نے پرچم کھولا ہے سجدے میں پڑی ہیں تعمیریں کیا ان کو خبر تھی زیر و زبر رکھتے تھے جو...

پورا پڑھیں

    فرضی لطیفہ خدا حافظ مسلمانوں کا اکبرؔ مجھے تو ان کی خوشحالی سے ہے یاس یہ عاشق شاہد مقصود کے ہیں نہ جائیں گے ولیکن سعی کے پاس سناؤں تم کو اک فرضی لطیفہ کیا ہے جس کو میں نے زیب قرطاس کہا مجنوں سے یہ لیلیٰ کی ماں نے کہ بیٹا تو اگر کر لے ایم اے پاس تو فوراً بیاہ دوں لیلیٰ کو تجھ سے بلا دقت میں بن جاؤں تری ساس کہا مجنوں نے یہ اچھی سنائی کجا عاشق کجا کالج کی بکواس کجا یہ فطرتی جوش طبیعت کجا ٹھونسی ہوئی چیزوں کا احساس بڑی...

پورا پڑھیں

1 پیہم موجِ امکانی میں اگلا پاؤں نئے پانی میں صفِ شفق سے مرے بستر تک ساتوں رنگ فراوانی میں بدن، وصال آہنگ ہَوا سا قبا، عجیب پریشانی میں کیا سالم پہچان ہے اُس کی وہ کہ نہیں اپنے ثانی میں ٹوک کے جانے کیا کہتا وہ اُس نے سُنا سب بے دھیانی میں یاد تری، جیسے کہ سرِ شام دُھند اُتر جائے پانی میں خود سے کبھی مِل لیتا ہوں میں سنّاٹے میں، ویرانی میں آخر سوچا دیکھ ہی لیجے کیا کرتا ہے وہ من مانی میں ایک دِیا آکاش میں بانی ایک چراغ سا پیشانی میں *** 2...

پورا پڑھیں

حمد تعریف اس خدا کی جس نے جہاں بنایا کیسی زمیں بنائی کیا آسماں بنایا پاوں تلے بچھایا کیا خوب فرشِ خاکی اور سر پہ لاجوردی اِک سائباں بنایا مٹی سے بیل بوٹے کیا خوشنما اُگائے پہنا کے سبز خلعت ان کو جواں بنایا خوش رنگ اور خوشبو گل پھول ہیں کھلائے اِس خاک کے کھنڈر کو کیا گلستاں بنایا میوے لگائے کیا کیا ، خوش ذائقہ رسیلے چکھنے سے جن کے مجھ کو شیریں دہاں بنایا سورج سے ہم نے پائی گرمی بھی روشنی بھی کیا خوب چشمہ تو نے اے مہرباں بنایا سورج بنا کے تو نے رونق...

پورا پڑھیں
1 2 3 6